پیپکن“ کو ٹائٹ رکھنے کیلئے موت کا کھیل ”

نیو یارک(جیٹی نیوز) طبی محققین نے کینسر کے مرض میں مبتلا سیکس کی دلدادہ لڑکیوںمیں اس موذی مرض کی اصل وجہ جاننے کیلئے طویل ریسرچ کی ۔ اس حوالے سے جب اصل وجہ سامنے آئی تو محققین کے بھی رونگٹے کھڑے ہوگئے۔ریسرچ کے مطابق سیکس کی دلدادہ وہ تمام لڑکیاں جنہوں نے اپنی ”پیپکن“ کو ٹائٹ کرنے کیلئے مخصوص ادویات کا استعمال کیا انہیں کینسر جیسے موذی مرض کا سامنا کرنا پڑا۔امریکہ میں جنسی کاروبار سے منسلک ہزاروں لڑکیوں میں سے سینکڑوں ابتک کینسر کے ہاتھوں ہلاک ہو چکی ہیں،یہ لڑکیاں گاہک کے آنے سے پہلے انتہائی مضر اثرات والی ایسی کریمیں استعمال کرتی تھیں جو ان کی ”پیپکن“ کو ٹائٹ کر دیتی تھی اور گاہک کو ایسا محسوس ہوتا تھا کہ جیسے یہ سیکس ورکرکنواری ہو۔

اس حوالے سے محققین نے بتایا ہے کہ پیپکن کو ٹائت کرنے کیلئے جو کریمیں استعمال کی جاتی ہیں وہ اسقاط حمل کے دوران جو مواد باہر نکلتا ہے اس سے تیار کی جاتی ہیں،میک اپ کی بہت سی پراڈکٹس میں بھی اسقاط حمل کے دوران انسانی جسم سے باہر آنے والا ضائع شدہ مواد کا استعمال کیا جاتا ہے اور فیملی کلینکس سے یہ مواد یا تو مہنگے داموں کرید لیا جاتا ہے یا پھر پیرا میڈیکل کا سٹاف اسے چوری کر کے بیچ دیتا ہے۔ امریکہ کے علاوہ ایشیا کی خواتین پر بھی ریسرچ کی اور ان خواتین کا انتخاب کیا گیا جوجنسی پیشہ ور تھیں اور یہ ہی ان کا ذریعہ روزگار تھا۔تحقیق سے معلوم ہوا کہ وہ لڑکیاں جو چھالیہ کا بے دریغ استعمال کرتی تھیں انہیں معدے اور گلے کا کینسر لاحق تھا۔ ان میں وہ خواتین بھی شامل تھیں جو سیکس ورکر نہ تھیں بلکہ اپنے جیون ساتھی کوخوش رکھنے اور ضرورت سے زائد تسکین پہنچانے کیلئے چھالیہ کا استعمال کرتی تھیں۔ان خواتین میں بریسٹ کینسر کی شکایات بھی سامنے آئیں۔ سائنسی رو سے چھالیہ جسم کے تنگ و تاریک حصوں کواندر سے خشک کر دیتی ہے،پانی کی کمی کے باعث انسانی جسم کے نازک اعضا سکڑتے جاتے ہیں ۔

خواتین میں چھالیہ کے بے دریغ استعمال سے شروع شروع میں پیاس کی شدید طلب ہوتی ہے ،آخر کارجسم اس کا عادی ہو جاتا ہے۔وہ پیشہ ور خواتین جو اپنے خاص عضو ”پیپکن“ کو ٹائٹ دیکھنا چاہتی ہیں،چھالیہ اس کا بہترین طریقہ ہے ۔محققین کے مطابق اس کا استعمال فائدہ مند ہے لیکن اس کا روزمرہ میں استعمال صرف اور صرف کینسر کا موجب بنتا ہے،اس کے برعکس ترقی یافتہ ممالک میں چھالیہ کی بجائے موذی کریمیں اور ادویات استعمال کی جاتی ہیں جو گاہک کی سیکس کی لذت تو بڑھا دیتی ہیں لیکن سیکس ورکر کو موت کو منہ مین دھکیل دیتی ہیں۔

Girls jtnonline1

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.